اگر آپ اپنے ارد گرد نظر گھمائیں تو کئی ایسے بچے بڑے نظر آئیں گے جن کے دانتوں میں کیڑا لگا ہوا ہو، زیادہ تر افراد کا خیال ہوتا ہے کہ جب ہم کھانا کھاتے ہیں اور دانت صاف نہیں کرتے تو کھانے کے اجزاء دانتوں میں رہ جانے کی وجہ سے دانتوں میں کیڑا لگ جاتا ہے اور وہ سڑجاتے ہیں۔ لیکن ایسا بالکل نہیں ہے، امریکی ماہر دندان کی جانب سے پیش کیا گیا یہ نظریہ اب آہستہ9 آہستہ رد ہوتا جارہا ہے۔ دانٹوں کے ماہرین کا خیال ہے کہ دانتوں میں کیڑا لگنے کا تعلق ہماری روز مرہ خوراک سے ہے۔ماہرین کے مطابق اگر ہماری روز مرہ خوراک میں غذائیت کم ہو تو دانتوں میں کیڑا لگنا یقینی ہے۔امریکا سے تعلق رکھنے والے محقق ڈاکٹر ویسٹن پرائس نے بتایا کہ اگر کھانے میں پروٹین، منرلز اور غذائیت کی کمی ہو تو اس کی وجہ سے انسان کی ہڈیاں اور دانت کمزور ہونا شروع ہوجاتے ہیں۔انہوں نے مزید بتایا کہ خوراک میں ان تمام چیزوں کی کمی کے باعث خون میں کیلشیئم اور فاسفورس کا تناسب بگڑ جاتا ہے، جبکہ بیکٹریا ان کمزوریوں کی وجہ سے حملہ آور ہوکر دانتوں میں کیڑا لگنے کا باعث بنتے ہیں۔ڈاکٹر ویسٹن پرائس نے مشورہ دیا ہے کہ دانتوں کے کیڑوں سے نجات حاصل کرنے کیلئے ہمیں اپنی خوراک کی جانب خاص توجہ دینی ہوگی۔انہوں نے خوراک میں چند بنیادی تبدیلیوں کا ذکر کرتے ہوئے بتایا کہ اگر ہم اپن روز مرہ خوراک میں کھانے میں ناریل کا تیل، گوشت، ڈیری اور سی فوڈ وغیرہ کا استعمال کرے تو یہ بہت مفید ثابت ہوگا اور اس طرح دانتوں کو کیڑا لگنے سے بھی کافی حد تک بچایا جاسکتا ہے۔