ملتان : امیر جماعت اسلامی ملتان میاں آصف محمود اخوانی نے کہا ہے کہ حکمران عوام کو ریلیف دینے کی بجائے مہنگائی اور ٹیکسوں کی مد میں تکلیف پہنچا رہے ہیں ۔ حکومت نے عوام کو ریلیف دینے کی بجائے آتے ہی چیزوں کی قیمتیں بڑھانا شروع کردی ہیں۔ عوام پر بیک وقت بجلی اور پیٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں اضافہ کے بعد اب درآمدی اشیاء پر مزید ٹیکس تبدیلی کے دعوے داروں کے منہ پر تمانچہ ہے۔ انہوں نے کہا کہ غریب اور سفید پوش عوام پہلے ہی مہنگائی کے ہاتھوں پریشان ہیں اب حکومت کی طرف سے 1300 سے زائد اشیاء پر ڈیوٹی کی مد میں ٹیکس کی وصولی سے قیمتیں آسمان پر پہنچ جائیں گی۔انہوں نے مزید کہا کہ کمر توڑ مہنگائی سے عوام پہلے ہی بے حال ہیں غریب عوام کا چولہا مہنگائی کی وجہ سے بجھ رہاہے اور لوگ خودکشیاں کرنے پر مجبور ہیں۔ حکومت کا عوام کے ساتھ کیسا انصاف ہے پہلی بار کسی حکومت نے آتے ہی گیس کی قیمتوں میں 46 فیصد اور بجلی کی قیمتوں میں بھی اضافہ کردیاگیا۔ بجلی اور گیس کی قیمتوں میں اضافے سے ہر چیز مہنگی ہو جاتی ہے۔ یوریا کی بوری کی قیمت میں آٹھ سو اضافہ کر کے حکومت نے کسانوں اور چھوٹے زمینداروں کے لیے مشکلات پیدا کردی ہیں جس سے زراعت ترقی کی بجائے مزید تنزلی کی طرف جائے گی ۔آصف محمود اخوانی نے مزید کہاکہ حکومت نے عوام سے کرپشن، مہنگائی اور بے روزگاری ختم کرنے کے وعدے کیے تھے، لیکن گیس ،بجلی اور درآمدی اشیاء کی قیمتوں میں موجودہ اضافہ نے عام آدمی کی پریشانیوں میں بے انتہا اضافہ کر دیا ہے۔ ہم حکومت کے اس فیصلے کو مسترد کرتے ہیں اور حکومت سے توقع رکھتے ہیں کہ وہ اپنے اس فیصلے کو واپس لے کر عوام پر مہنگائی کا مزید بوجھ نہیں ڈالے گی۔اور فوری طور پر بجلی بلوں کے ساتھ پیٹرولیم مصنوعات میں عوام کو زیادہ سے زیادہ ریلیف دے ، حکومت اگر عوام کو کوئی ریلیف نہیں دیتی تو تکلیف بھی نہ دے