ڈیرہ بگٹی : سوئی پاکستان ہاؤس میں حکومت کی جانب سے ہتھیار ڈالنے والے 132 سابقہ فراریوں کو نقد امداد دیا گیاجس میں سابقہ فراری کمانڈروں میں 9 لاکھ فی کس ا ور سیکنڈ کمانڈر کو650000اور دیگرسرنڈر فراریوں میں 3 لاکھ فی کس تقسیم کیا گیاسرنڈر فراریوں میں مہمان خصوصی سیکٹر کمانڈر ایسٹ اور ڈپٹی کمشنر ڈیرہ بگٹی جناب یاسر بازئی اور ڈی پی او عبدالروف بڑایچ نے رقم تقسیم کیے پاکستان ہاوس میں تقریب سے خطاب کرتے ہوئے سیکٹر کمانڈر ایسٹ زولفقار باجوہ نےکہا کہ حکومت اور اداروں کی کوششوں سے اب تک درجنوں فراری جو کہ را اور اس کے ایجنٹوں کے ایما پر ملک دشمن عناصر کے بہکاوے میں آکر غلط راہ پر چل رہے تھے قومی داھارے شامل ہوئے اب ان کو حکومت کی جانب سے امداد دیا جارہا ہے اس موقع پر ہتھیار ڈالنے والے فراریوں نے کہا کہ وہ اب کسی کے بہکاوے میں نہیں آئیں گے اور قومی تنصیبات اور اپنے وسائل کی حفاظت خود کرینگے ان کا مزید کہنا تھا کہ بلوچستان حکومت کی جانب سے فراہم کردہ رقم بطور امداد سرنڈرہو نے والے فراریوں کو دی جا رہی ہے تاکہ وہ ابتدائی طور پر اپنی ضروریات کوپورا کرسکیں اور محب وطن شہری بن کر اپنے بچوں اور خاندان کی کفالت کرسکیں پہاڑوں پر جانیوالے نوجوانوں کو پیغام دیتا ہوں کہ وہ بھی راہ راست پر آئیں اور ملکی ترقی میں اپنا کردار ادا کریں اس موقع پر میر جان محمد شاہمراد بگٹی جمال خان کلپر وڈیرہ غلام نبی شمبانی وڈیرہ محمد بخش بگٹی اور وڈیرہ الی بخش بگٹی وڈیرہ اباد وڈیرہ بشیر الله کلپر اور دیگر ڈیرہ بگٹی کے قبائلی عمائدین اور حساس اداروں کے سربراہان بھی موجود تھے جنھوں نے حکومت کی جانب سے ہتھیار ڈالنے والے فراریوں کےلئے فراہم کردہ امداد فرداً فرداً سرینڈر ہونے والے فراریوں میں تقسیم کیا،